ادبی میلہ پر شکریہ، میرے لاہور

کئی دن قبل سماجی رابطے کی ویب سائٹ پر ایک دعوت نامہ موصول ہوا۔ لاہور ایکسپو سینٹر میں چار سے آٹھ فروری کے دوران تیسواں عالمی کتب میلہ سجنے جا رہا تھا ۔ کتاب سے عشق رکھنے والوں کیلیے یہ، بلاشبہ ایک خوبصورت کوشش تھی ۔

لاہور دہائیوں سے پڑھنے ، جذب کرنے ،لکھنے اور پڑھانے والوں کے اعتبار سے خوش بخت رہا ہے۔ یہاں کثیر تعداد مطالعہ اور کتب کی خرید و فروخت سے وابستہ ہونے کے باوجود اگر دل میں کہیں شائبہ آتا ہے کہ عالمی کتب میلہ کامیاب ہوگا یا نہیں تو یہ عکاسی ہے اس اجتماعی رویے اور خوف کی جس میں آپ اور میں سانس لیے جاتے ہیں اور جیے جا رہےہیں۔معاملہ کچھ عرصے سے ایک اور جانب بھی راہ نکالنے میں کامیاب رہا ہے ۔جہاں لوگ ڈگریاں سمیٹنے ، نو سے بارہ کی نوکری اور “فیملی ٹائم” میں ایسے محو ہوئے ہیں کہ مطالعہ کی انگلی چھوڑ کر کہیں میلے میں کھو گئےہیں۔ادبی محافل کا انعقاد بھی انحتاط کا شکار ہے ۔کِس تاریخ کو کونسے سینما میں کونسی فلم کا پریمئر ہونے جا رہا ہے،اس کا دھیان ضرور رکھیے کہ اچھی تفریحی ملک میں واپسی کی راہ ہموار کررہی ہے مگر اُس تعداد میں بھی اضافہ ہونا چاہیے جو کتاب کی منتظر رہے۔گزشتہ کچھ سالوں کے دوران کُتب میلوں میں آنے والوں کی تعداد بڑھتی دکھائی دیتی ہے۔ خوش آئیند بات ہے کہ ہر عمر کے لوگ شرکت کرتے ہیں اور اپنے ذوق اور استطاعت کے مطابق تلاش کر کےمطلوبہ کتب خریدتے ہیں۔

اس برس یہ عالمی کُتب میلہ حکومتِ پنجاب کے تعاون سے منعقد ہو ا تھا ۔مگر کوئی بھی حکومت ایسے سِلسلوں کو کامیاب نہیں بنا سکتی جب تک عوام کی شرکت یقینی نہ ہو۔قاری کا رشتہ بَنا رہے تو مطالعہ کی روح بھی صحت مند رہتی ہے اور معاشرے کی رگوں میں دوڑتی بے چینی، منفیت اور قنوطیت میں واضح کمی کا رجحان پروان چڑھتا ہے ۔مباحث میں علمی و تحقیقی گفتگو سے سیکھنے کی راہیں بنتی اور کھلتی ہیں۔

خواہش ہے کہ ایسے میلے ملک کے تمام حصوں میں منعقد کروائے جائیں۔حکومتی سرپرستی ہو اور عوام کو درسی کتب سے آگے کا جہاں کھوجنے کے مواقع ملیں۔کتاب دوستی تشدد اور عدم برداشت کو شکست دینے اور اپنی ذات و سوچ کی تراش خراش کا اہم راستہ ہے۔ پیڑ پودے کانٹ چھانٹ کے بعد نئی آب و تاب سے بڑھتے ہیں اسی طرح انسانی تہذیب اور سوچ کی پرورش میں وقت کے تقاضوں کے مطابق قطع برید لازم ہے۔

چند ہفتے قبل اردو ادب کا ایک عہد،ہمارا داستان گُو اپنی زندگی کی داستان مکمل کرگیا۔انتظار حسین چلے گئے۔کچھ سال قبل احمد فواد سے ملاقات میں ان کا کہنا تھا کہ ، “عجیب بات ہے، ہمارے نوجوان مطالعہ نہیں کرتے،مشاھدہ نہیں کرتے ، پاکستان کا اور دوسرے ممالک کا ادب نہیں پڑھتے اور کہتے ہیں کہ اپنے سٹائل میں لکھیں گے۔۔۔یہ کیسے ممکن ہے کہ آپ بغیر مطالعہ و مشاھدہ اچھا کام کرسکیں۔ چاہے وہ ادب ہو یا کاروبار؟ ۔۔۔ پڑھنا چاہیے اور بہت پڑھنا چاہیے تاکہ وژن پیدا ہو اور آپ کا اپنا اسلوب نکھر کر سامنے آ سکے۔”

اس نصیحت اور خواہش کے بعد میری کیا بساط تھی کہ مزید کچھ تحریر کرنے کی جسارت کروں۔ مگر سچ تو یہ ہے کہ لاہور کے عالمی ادبی میلہ نہ صرف لاہور، بلکہ پاکستان کی روح سے مزید گہرا جُڑنے کا موقع فراہم کیا۔

جیو پاکستان ۔ جیو لاہور!

Share This:

تبصرے